خاندان میں تشّدد اور زنا بالجبر

عوتوں، مردوں لڑکیوں اور لڑکوں کے پاس ہر قسم کے تشّدد کو نہ کہنے کا حق ہے۔ تشّدد کی نوعیت بشمول دیگرے جسمانی، نفسیاتی اور جنسی ہو سکتی ہے۔ عموماً تشّدد کرنے والے اور تشّدد کے شکار کا آپس میں قریبی تعلق ہوتا ہے۔ خاندان میں تشّدد کرنا ایک مجرمانہ فعل ہے، آپ اسے پولیس میں رپورٹ کرنے کا حق رکھتے ہیں۔ ڈنمارک میں بچوں کی پٹائی کرنا منع ہے۔ زنا بالجبر قابلِ تعزیر ہے۔ جس کے ساتھ زنا بالجبر کا ارتکاب ہوا ہو، وہ خود کبھی قصور وار نہیں ہوا کرتا ہے۔

ڈنمارک میں تشّدد کرنا غیر قانونی فعل ہے، اس لئے یہ خود آپ کے اور آپ کے بچوں کے مفاد میں ہے کہ آپ تشّدد سے نجات پانے کے لئے مدد مانگیں۔ تشّدد اور جنسی حملہ مجرمانہ فعل ہیں جو قابلِ سزا ہیں۔ آپ ایسی نوعیت کے حملہ کی رپورٹ درج کروائیں۔

تشّدد کی بہت سی اقسام ہیں، جن کا شکارمرد اور عورتیں دونوں ہو سکتے ہیں:

  • جسمانی تشّدد; مار پٹائی گلا گھونٹنا
  • نفسیاتی تشّدد; مثلاً زیر کنٹرول رکھا جانا یا حقیر گردانا جانا محبوس کیا جانا، یا تشّدد کی دھمکی دی جانا  
  • جنسی تشّدد; مثال کے طورشریک حیات کا آپ کے ساتھ زنا بالجبر کرنا
  • مادی تشّدد; مثال کے طور پہ آپ کے کپڑوں اور اشیا کو جان بوجھ کر نقصان پہنچانا
  • معاشی تشّدد; مثال کے طور پہ آپ کی بلا اجازت کسی دوسرے کا آپ کی  معیشت کا تعین کرنا

ملک بھر میں کرائسس مراکز پائے جاتے ہیں۔ اگر آپ تشّدد یا تشّدد کی دھمکیوں کا شکار ہوں تو آپ ان مراکز میں کچھ عرصہ کے لئے قیام کر سکتی ہیں۔ آپ وہاں اپنے بچوں سمیت مقیم ہو سکتی ہیں۔ تشّدد کے شکار مردوں اور خاندانوں کے لئےبھی کرائسس سنٹر موجود ہیں نیز غیرت سے متعلقہ تشّدد کے شکار اکیلے مردوں کے لئے بھی یہ سہولت موجود ہے۔

اگر آپ زنا بالجبر یا زنابالجبر کی کوشش کا شکار ہوں یا کوئی فرد جسے آپ جانتے ہوں آپ کو جبراً جنسی تعلق قائم کرنے پہ مجبور کرے تو آپ جنسی تشّدد کے متاثرین کے قریبی سنٹر سے رجوع کریں۔  اگر آپ کا شریکِ حیات آپ کی مرضی کے خلاف آپ کو جبراً جنسی اختلاط پہ مجبور کرے تو یہ بھی زنابالجبر ہے۔

رابطہ

لوک (LOKK) -ڈنمارک میں عورتوں کےکرائسس مراکز کی ملکی تنظیم
(Landsorganisationen af kvindercentre i Danmark)

اگر آپ اپنے خاندان میں تشّدد کا شکار ہوئے ہوں، تو آُپ لوک کے ہاں یا ایک کرائسس مرکز سے سے مدد مانگ سکتے ہیں۔ آپ یہاں محفوظ طرح سے  لمبے عرصہ تک مقیم  رہ سکتے ہیں۔ اگر آپ کو شبہ ہو کہ آپ کا کوئی قریبی دوست یا خاندان میں سے کوئی تشّدد کا شکار ہے تو آپ لوک کی ہاٹ لائین پر فون کرکے رہنمائی حاصل کر سکتے ہیں کہ آپ کس طرح مددگار ثابت ہو سکتے ہیں۔ لوک طلاق، اجازت نامہ برائے قیام اور خاندان کی یکجائی کی حیثیت میں آئی ہوئی عورتوں جو خاندان میں تشّدد کا شکار ہوں ان کےمعاشرتی حقوق کے ضمن میں  قانونی مشورے فراہم کرتی ہے۔  

آپ لوک کی ہاٹ لائین پرگمنام رہتے ہوئے رہنمائی حاصل کر سکتے ہیں۔
چوبیس گھنٹے کھلی ہاٹ لائین: 82 30 20 70
www.lokk.dk

اگر آپ دیگر تہذیبی و ثقافتی پسِ منظر کی حامل اقلیت کے نوعمر ہیں تو آپ لوک کی مشاورتی ٹیم سے مدد حاصل کر سکتے ہیں۔
www.etniskung.dk

مردوں کے کرائسس مراکز
مردوں کے لئے بھی کرائسس مراکز قائم ہیں، جہاں اپنی بیوی یا خاندان کے ہاتھوں جسمانی یا نفسیاتی تشّدد کا شکار ہونے والا مرد مقیم ہو سکتا ہے۔
voldmodmand.dk 

(RED Safehouse) ریڈ محفوظ گھر  دونوں صنفوں کے ایسے اکیلے نوجوان کو کرائسس مرکز میں جگہ کی پیشکش کرتے ہیں، جو اپنے خاندان کے ہاتھوں عزّت سے متعلقہ تشّد د کے شکار ہوں۔
www.red-safehouse.dk

زنابالجبرکے متاثرین کا مرکز
ڈنمارک کے ہر ایک ریجن میں زنا بالجبر کے متاثرین کا مرکز قائم ہے۔
www.voldtaegt.dk

 

حقوق و فرایض

مردوں اور عورتوں ہر دو کو اپنے جسم پر اخیتار رکھنے کا حق ہے۔ اپنی بیوی یا خاوند سے ہم بستری کو نہ کہنے کا آپ کوحق ہے۔

بالغوں یا بچوں پر جسمانی، نفسیاتی یا جنسی تشّدد کرنا غیر قانونی اور قابلِ سزا ہے۔ تشّدد کی پولیس کو رپورٹ کرنا آپ کا حق ہے۔

 کسی کو جنسی تعلق قائم کرنے پہ مجبور کرنا غیر قا نونی ہے۔ اگر کسی کے خلاف زنابالجبر کا ارتکاب کیا گیا ہو تو اسے فوری طور پر پولیس کے پاس جانا چاہیے۔

  • پورے ڈنمارک میں آپ چوبیس گھنٹے کرائسس مراکز سے مدد لے سکتی ہیں۔
  • کرائسس مرکز میں بچوں سمیت مقیم ہونا آپ کا حق ہے۔
  • اگر آپ خاندان میں تشّدد کا شکار ہوں تو اپنی کمیون کے ہاں مدد حاصل کر سکتی ہیں۔ 

ہم بستری کے لئے ''نہ'' کہنا آپ کا حق ہے- اور آپ کا حق ہے کہ آپ کی ''نہ'' کا احترام کیا جائے۔ اگرچہ شروع میں ''نہ'' کہی نہ گئی ہو تب بھی جنسی اختلاط پر''نہ'' کا احترام کیا جانا چاہیئے۔ رضامندی کے بغیر ہم بستری عصمت دری ہے۔

 
 
 

پی ڈی ایف کو سیو کریں لنک بھیجیں